فروشگاه اینترنتی هندیا بوتیک
آج: Wednesday, 19 February 2020

www.Ishraaq.in (The world wide of Islamic philosophy and sciences)

وَأَشۡرَقَتِ ٱلۡأَرۡضُ بِنُورِ رَبِّهَا

608411
’’اُم ابیھا‘‘ کبھی کبھی جبر سے فرار ممکن نھیں۔ ضروری ہے کہ طبیعت کے قوانین کے سامنے سر خم کر لو اور کہو چشم۔ مجبور ھو کہ گھر کے دروازے کو گرمی، سردی، بھار و خزاں میں کھولا رکھو۔۔۔ مجبور ھو کہ موت کے سامنے ھتھیار ڈال دو اور لبیک کہو۔۔۔ مجبور ھو، اُن ناگھانی آفات کے سامنے تسلیم ھو جاو کہ جو اچانک سے آکر تمھارے گھروں کو ویران کر دیں۔۔۔۔ مجبور ھو کہ غم کو خوش آمدید کہو۔۔۔۔ اور عشق کے سامنے شانے جھکا دو اور کہو کہ۔۔۔۔ آ۔۔۔ یہ تیرا ھی گھر ہے۔۔۔ تاکہ وہ اپنی تمام خوبیوں اور تلخیوں کے ساتھ تمھارے خانہِ دل میں قدم رکھے۔۔۔۔ عشق کہ جو مھمان بن کر دل کی وادی میں قدم زن ھوتا ہے، مگر پھر تمام ھستی و وجود کا مالک۔۔۔۔۔ حتیٰ ایک دن آنکھ کھول کر دیکھا کہ وجود میں سوائے عشق کے کچھ باقی نھیں۔۔۔۔۔ آنکھوں کی غنودگی کو برطرف کرکے عینک کی گرد کو صاف کیا۔۔۔۔ پھر دیکھا تو ماں تھی۔۔۔۔ اپنے والد کی ماں۔۔۔ اپنی ماں کی ماں۔۔۔۔ اپنے جامعے کی ماں۔۔۔۔۔ اگرچہ اس نے ان کو جَنا، نہ تھا۔۔۔۔۔ مگر احساس مادری اس کے چھرے سے نمایاں اور حسِ مادری نے اس کی روح کو تسخیر کر رکھا تھا۔
دردِ مادری، فقط بچہ جننے کا درد نھیں۔۔۔۔ ماں یعنی درد عشق کا متحمل ھونا۔۔۔۔ وہ عشق کہ جو اپنے ساتھ خنجرِ فراق بھی رکھتا ہے اور زھرِمرگ بھی۔۔۔ جو لبوں کو سی دیتا ہے اور سر میں چاندی کی تاریں نمودار ھو جاتی ہیں۔۔۔۔۔ ماں بولو، نا۔۔۔۔ کہ تم نے کتنے ھی سکوت کے تلخ جام پیئے ہیں۔۔۔۔ اور کتنی ھی بار درد سھا۔۔۔۔۔ مگر تمھارے آبرو چشم تک خم ھوئے۔۔۔۔ اے زینت نساء۔۔۔۔ تمھارا جسم زخموں سے چور ہے۔۔۔۔ اور رسم مادری میں تمھارے لب کتنی ھی بار لبِ تیغ تک جا پھنچے۔۔۔۔۔ رسم مھربانی میں کتنی ھی بار جلائی جا چکی ھو۔۔۔۔۔۔ تم کوئی شکوہ کیوں نھیں کرتی۔۔۔۔۔ ماں۔۔۔۔ میرے ساتھ باتیں کرو۔۔۔ وہ راز بتاو کہ جو سینہ بہ سینہ تم تک پھنچے ہیں۔۔۔۔۔ وہ درد بیان کرو جو نسل در نسل تم نے سھے ہیں۔۔۔۔۔
تم بتاو عشق کیا ہے۔۔۔ کیونکہ تم زیادہ آشنا ھو بلکہ خود مجسمہ عشق ھو۔۔۔۔۔ ان سب رازوں سے پردہ اٹھاو۔۔۔ تاکہ میں جان پاوں کہ ماں ھونا کیا ہے۔۔۔؟ کیونکہ میرے معاشرے کے بچے ابھی اس قدر بالغ نھیں ھوئے کہ شخصیت و ضرورت مادری کو پھچانیں۔۔۔۔ یہ ابھی تقلیدانہ فکر کے حامل ہیں کہ ماں یعنی وہ شمع کہ جو جل کر آب ھو جاتی ہے۔۔۔ یا وہ شعلہ کہ جو بھڑکتا ہے اور زمین بوس ھو جاتا ہے۔۔۔۔۔ یا وہ پھول کہ جو بالآخر اپنی خوشبو کھو دیتا ہے۔۔۔۔یہ ابھی تیرے جاوید و لازوال پہلو سے ناآشنا ہیں۔۔۔۔ میرے معاشرے کے فرزند ابھی بس تیری ظاھری شکل و صورت سے آشنا ہیں۔۔۔ ماں۔۔۔ درحقیقت اگر تیرا وجود نہ ھوتا تو۔۔۔ چشموں کی نغمہ خانی نہ ھوتی۔۔۔۔ صبا میں لطافت نہ ھوتی۔۔۔۔ سورج تابان نہ ھوتا۔۔۔۔ نبات میں رشد نہ ھوتی۔۔۔۔ آب میں روانی نہ ھوتی۔۔۔۔ گُلوں میں خوشبو نہ ھوتی۔۔۔۔ بلبل غزل سُرا نہ ھوتی۔۔۔۔
آدم علیہ السلام میں روح نہ پھونکی جاتی۔۔۔۔ کشتیِ نوح علیہ السلام ساحل تک نہ آتی۔۔۔۔ آتشِ ابراھیم علیہ السلام خاموش نہ ھوتی۔۔۔۔ موسیٰؑ علیہ السلام کو نیل میں رستہ نہ ملتا۔۔۔۔ یوسف علیہ السلام کو کنویں سے نجات نہ ملتی۔۔۔۔ گلِ مریمؑ میں مہک نہ ھوتی۔۔۔۔ نسیمِ عیسیٰؑ مردوں کو زندہ نہ کرتی اور باغ گل محمدیؑ، انفاس عالم کو معطر نہ کرتا۔۔۔۔۔۔ ماں اگر تو نہ ھوتی تو۔۔۔۔ تربت کربلا کو شفا نہ ملتی۔۔۔۔ حسنؑ کو سخاوت و وقار۔۔۔۔ حسینؑ کو صبر و قرار۔۔۔۔ سجادؑ کو صحیفہ راز۔۔۔۔ باقرؑ کو علم۔۔۔۔ صادقؑ کو صداقت۔۔۔۔ کاظمؑ کو اجابت۔۔۔۔ رضاؑ کو رضایت۔۔۔۔ تقی کو تقاوت۔۔۔۔ نقی کو نزاکت۔۔۔۔ عسکری کو عسکر اور مھدی کا قیام نہ ھوتا۔۔۔ بلکہ وجود منجی بشریت نہ ھوتا۔۔۔ اگر مھدیؑ نہ ھوتا تو عالم میں حرکت نہ ھوتی۔۔۔۔ یعقوبؑ کی آنکھیں انتظار یوسف میں رھتیں اور کبھی بینا نہ ھوتی۔۔۔۔ شیرازہ خلقت بکھر جاتا۔۔۔۔ نبضِ زمان پھٹ جاتی۔۔۔۔ زمین اپنے اھل کو نگل جاتی اور وعدہ خدا کبھی محقق نہ ھوتا۔۔۔۔۔۔
اے ماں یہ سب تیرے وجود کی برکت ہے۔۔۔۔ مگر ھم شرمندہ ہیں کہ زمانے نے تیرے نام کی حرمت کو پامال کیا۔۔۔۔ تُو بحر قرآنی ہے کہ جس نے جامعہِ بشری کو موتیوں سے نوازا۔۔۔۔ مگر تعجب ہے فریبِ روزگار پر کہ کائنات نے حق مادری کے عوض، تجھ پر تازیانے برسائے۔۔۔۔ تیرے ارمانوں کو روندا۔۔۔۔ مگر کبھی سنا ہے کہ بیٹوں نے ماں کا گھر جلایا ھو۔۔۔۔ کیا شفقتِ مادری کا صلہ طمانچوں سے ادا کیا جاتا ہے۔۔۔۔ افسوس صد افسوس، غلبہ خواھشات پر کہ جس نے بیٹوں کے ہاتھوں ماں کو اس قدر مجبور کر دیا کہ کہا۔۔۔۔۔ میرا جنازہ تب اٹھنا ’’اذا ھدات العیون و نامت الابصار‘‘ کہ جب آنکھیں آرام میں اور لوگ خواب غفلت میں ھوں۔۔۔۔۔
بے شک انھوں نے حرمتِ مادری کو پامال کیا ہے۔۔۔۔ ماں کی شفقت کا گلہ گھونٹا ہے۔۔۔۔ فضا اس قدر آلودہ کی کہ ماں کی محبت دم توڑنے لگی۔۔۔۔ سانس لینا مشکل ھوگیا۔۔۔۔ اس قدر ستم سے کام لیا، قریب تھا کہ دن کی سفیدی رات کی تاریکی میں بدل جائے۔۔۔۔ آج بھی اس ماں کی مظلومانہ صدائیں مدینے کی گلیوں سے ٹکرا رھی ہیں۔۔۔۔ اور عالم انسانیت کے دامن میں ہاتھ ڈال کر وہ ماں صرف ایک ھی سوال کا جواب چاھتی ہے کہ۔۔۔۔ کیا اس کی الفت و محبت کا بدلہ بس یھی چند پتھر ہیں۔۔۔۔۔۔۔؟
تحریر: ساجد علی گوندل

Add comment


Security code
Refresh